پیر 19 نومبر 2018ء
پیر 19 نومبر 2018ء

کشمیر کونسل تنازعہ،ہائی کورٹ میں نئی درخواست دائر

اسلام آباد ( دھرتی نیوز ) وفاقی حکومت کی ہدایت پر ڈپٹی اٹارنی جنرل پاکستان راجہ خالد محمود ایڈووکیٹ نے اسلام آباد ہائی کورٹ میں جمعہ کو ایک درخواست دی کہ آزاد جموں و کشمیر کونسل سے متعلق بعض ممبران کشمیر کونسل کی جانب سے دائر کی گئی رٹ پٹیشن کی سماعت 30مئی کی بجائے اس سے قبل کی جائے ، اس رٹ پٹیشن کے منظور ہونے کی وجہ سے وہ حکومتی نوٹیفکیشن معطل ہو گیا تھا جس کے مطابق کشمیر کونسل کے بعض مالی ، انتظامی احتیارات حکومت آزادکشمیر کو ملنے تھے ، موجودہ وفاقی حکومت کی معیاد بھی 31مئی کو ختم ہونے والی ہے اور حکومت کی خواہش ہے کہ وہ اپنی مدت معیاد میں اس فیصلے پر عمل کروائیں اور 27مئی کو مظفرآباد میں منعقدہ جائنٹ سیشن وقت مقررہ پر ہو سکے ، ڈپٹی اٹارنی جنرل راجہ خالد محمود ایڈووکیٹ نے ”دھرتی “ کو بتایا کہ انہیں وفاقی حکومت نے ہدایت کی ہے کہ وہ سماعت جلدی کروانے کیلئے عدالت سے رجوع کریں ۔ لہٰذا جمعہ کو عدالت میں یہ نئی درخواست دائر کی گئی ہے۔ خیال ہے کہ عدالت آج ہفتے کو اس پر کوئی فیصلہ کرے گی ، دریں اثناءوزیراعظم آزادکشمیر راجہ محمد فاروق حیدرخان سے ممبران کشمیر کونسل عبد الخالق وصی، ملک پرویز اعوان ،صدیق بٹلی اختر پرویز اعوان، مختارعباسی اور یونس میر کی ملاقات۔ممبران کشمیر کونسل کے تحفظات دور ، اختلافی امور پر اتفاق راے طے پا گیا۔ ملاقات میں ممبران کشمیر کونسل نے آزادکشمیر کو آئینی طورپر بااختیار بنانے کے لیے ملکر کوششیں کرنے کے ساتھ ساتھ ریاست کی تعمیر و ترقی اوربہتری کے لیے ہر ممکن تعاون کی یقین دہانی کروائی ۔ممبران کونسل نے عبوری آئین میں ترامیم اور آزادکشمیر کو بااختیار بنانے کے حوالے سے مکمل تائید و حمایت کااعلان کرتے ہوئے یقین دلایا کہ وہ اس سلسلہ میں اپنا بھرپور کردار ادا کرینگے ۔ وزیرحکومت چوہدری محمد عزیز بھی اس موقع پر موجودتھے۔اب خیال ہے کہ 30مئی سے قبل تمام امور خوش اسلوبی سے حل کر لیے جائیں گے اور کشمیر کونسل کے مالی انتظامی امور کے اختیارات حکومت آزادکشمیر کو مل سکیں گے ۔