بدھ 18  ستمبر 2019ء
بدھ 18  ستمبر 2019ء

اساتذہ اور حکومت آمنے سامنے،ایمرجنسی ماننے سے انکار

راولپنڈی ( دھرتی نیوز ) آزادکشمیر اسکولز ٹیچرز آرگنائزیشن نے حکومت آزادکشمیر کی جانب سے محکمہ تعلیم اسکولز اور کالجز میں ایمرجنسی نافذ کرنے کے فیصلے کو یکسر مسترد کرتے ہوئے اس حکومتی فیصلے اور اپنے مطالبات کے حق میں اپنی جدوجہد مزید تیز کرنے پر اتفاق کیا ہے اور طے پایا ہے کہ 4فروری سے 6 فروری تک آزادکشمیر بھر کے ضلعی ہیڈ کوارٹرز پر ڈپٹی کمشنرز آفس کے سامنے احتجاجی دھرنے دیئے جائیں گے جبکہ 7فروری کو مظفرآباد میں آزادکشمیر بھر کے اساتذہ جمع ہو کر احتجاجی مظاہرہ کریں گئے جس کے دوران آئندہ کے لائحہ عمل کا اعلان کیا جائے گا ، یہ فیصلہ جات اتوار کو راولپنڈی میں منعقدہ آزادکشمیر سکولز ٹیچرز آرگنائزیشن کی مجلس عاملہ کے اجلاس میں کیے گئے ، اجلاس کی صدارت تنظیم کے مرکزی صدر سردار عارف شاہین نے کی جبکہ دیگر اراکین مجلس عاملہ نے بھی شرکت کی ، اجلاس میں اتفاق رائے سے سردار سجاد خان کو مجلس عاملہ کا مرکزی چیئرمین نامزد کیا گیا ہے ، اجلاس میں تعلیمی اداروں کے اندر ایمرجنسی کے نفاذ اور اس سے پیدا ہونے والی صورتحال کے حوالے سے تفصیلی تبادلہ خیال کیا گیا اور یہ طے پایا گیا کہ کالج اساتذہ کی تنظیم سے بھی اس حوالے سے بات کی جائے گی اور آئندہ کیلئے کوئی مشترکہ لائحہ عمل طے کیا جائیگا کیونکہ حکومت نے کالجز کے اندر بھی ایمرجنسی نافذ کر رکھی ہے ، اجلاس میں فیصلہ کیا گیا کہ اساتذہ کی یہ تنظیم حکومتی اقدامات کے سامنے کبھی بھی نہیں جھکے گی اور اساتذہ کے حقوق کے تحفظ کیلئے کسی بھی اقدام سے دریغ نہیں کیا جائیگا ، اجلاس کے بعد جاری بیان میں آزادکشمیر بھر کے اساتذہ سے اس احتجاجی تحریک کو کامیاب کرنے کی اپیل کی گئی ہے اور ان سے کہا گیا کہ وہ 4اور 7فروری کے احتجاجی پروگرامات کو ہر صورت کامیاب کریں ۔ اجلاس سے محبوب اعوان ،سردار سجاد، راجہ مجیب، حافظ محمد کاظم، سلیم چشتی، سردار شفقت حیات، راجہ یاسین، چوہدری منیر ناز، چوہدری سعید عالم، نثار اعوان، سردار ارشد، عبد العزیز خان، منصور عباسی، راجہ ناصر، ملک ادریس ،چوہدری محمد امین، طاہر شاہ، سردار فردوس، شبیر احمد خواجہ، محمد نعیم ،راجہ ضمیر ،حنیف شیخ، سردار انور، مرزا اکرم و دیگر نے خطاب کیا

آج کااخبار

سب سے زیادہ پڑھی جانے والی خبریں

کالم