جمعرات 16  ستمبر 2021ء
جمعرات 16  ستمبر 2021ء

جے کے ایل ایف کے دنوں دھڑوں کے درمیان مذاکرات ناکام

راولپنڈی (دھرتی نیوز)تفصیلات کے مطابق جموں و کشمیر لبریشن فرنٹ (جے کے ایل ایف)کے نئے دھڑے نے اپنے مرکزی کنوینر الطاف قادری اور زونل صدر توقیر گیلانی کی سربراہی میں سنٹرل انفارمیشن آفس چاندی چوک راولپنڈی میں لبریشن فرنٹ کے رہنماؤں رفیق ڈار، سلیم ہارون، ساجد صدیقی اور دیگر سے مذاکرات کیے جن کے بارے میں اطلاع ہے کہ وہ ناکام ہو گئے ہیں۔ذرائع کے مطابق مذاکرات شروع میں ہی اس وقت تلخی کا شکار ہو گئے جب ایک دھڑے کے سربراہ الطاف قادری نے اپنی بات شروع ہی ان الفاظ سے کی کہ ''چیئرمین یاسین ملک کے بعد جناب رفیق ڈار اور جناب سلیم ہارون نے تحریک کیلئے جو قربانیاں دی ہیں میرے جیسا کارکن وہاں ایک ہزار سال تک بھی نہیں پہنچ سکتا ہے''۔ اسکے بعد توقیر گیلانی نے اپنے مطالبات رکھے جن کے بارے میں اطلاع ہے کہ انھیں محمد رفیق ڈار نے سرے سے مسترد کر دیا ہے۔الطاف قادری جو ایک ہفتہ سے زائد دنوں سے پاکستان میں ہیں ان کے بارے میں اطلاع ہے کہ وہ راولپنڈی میں رفیق ڈار کے گھر قیام پزیر ہیں۔ یہ بھی اطلاع ہے کہ الطاف قادری کی پاکستان آمد کیساتھ ہی ان کے ساتھیوں نے انھیں استقبالیہ دینے کی بارہا کوشش کی جس پر وہ راضی نہیں ہوئے یہی وجہ ہے کہ 12 مارچ سے پاکستان آئے الطاف قادری کی کوئی سرگرمی منظر عام پر نہیں ہے۔ ذرائع نے بتایا ہے کہ الطاف قادری نے اپنی سربراہی میں قائم نئے دھڑے کے لوگوں کو دوبارہ یاسین ملک، رفیق ڈار، سلیم ہارون اور ساتھیوں سے ملکر جدوجہد تیز کرنے کی ہدایات کیں ہیں اسکے لیے انھیں متعدد ساتھیوں کا اعتماد بھی حاصل ہے تاہم ابھی تک معاملات یکسو نہیں ہو سکے ہیں۔مذاکرات کے عمل میں شریک ایک سرگرم ممبر نے بتایا کہ مذاکرات جن نکات پر کیے جا رہے تھے تقریباً سب ہی پر اتفاق کر دیا گیا تھا لیکن ڈاکٹر توقیر گیلانی کی گلگت بلتستان اور آزادکشمیر زون سے متعلق تجویز سے متعلق ابہام کی وجہ سے اتفاق رائے نہ ہو سکا جس کی وجہ سے مذاکرات ناکام ہوئے ہیں۔کوشش ہے کہ مذاکرات دوبارہ کیے جائیں لیکن اب چونکہ الطاف قادری کا کرونا ٹیسٹ پازیٹیو آیا ہے اس لیے اب یہ سلسلہ تعطل کا شکار ہی رہے گا۔  

آج کااخبار

سب سے زیادہ پڑھی جانے والی خبریں

کالم